سیہ مستی ہے اہلِ خاک کو اَبرِ بہاری سے

0

سیہ مستی ہے اہلِ خاک کو اَبرِ بہاری سے

سیہ مستی ہے اہلِ خاک کو اَبرِ بہاری سے
زمیں جوشِ طرب سے جامِ لب ریزِ سفالی ہے

اسد مت رکھ تعجب خر دماغی ہائے منعم کا
کہ یہ نامرد بھی شیر افگنِ میدانِ قالی ہے

Share.